19

فواد چوہدری کا سانحہ ماڈل ٹاؤن کھولنے کا اعلان

لاہور(فری ہینڈ نیوز)وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات فواد چوہدری نیسانحہ ماڈل ٹاؤن کی آزادانہ تحقیقات کرانے کا اعلان کردیا اور کہا کہ انتخابی مہم میں ہمارا وعدہ تھاکہ سانحہ ماڈل ٹاؤن واقعے میں ملوث افراد کو کیفرکردار تک پہنچائیں گے۔سینیٹ اجلاس میں شرکت کے بعد میڈیا سے گفتگو میں فواد چوہدری نے کہا کہ اپوزیشن کے جائر مطالبات سننے اور ماننے کو تیار ہیں،ان کو جو سہولت دے سکتے ہیں وہ دے رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن نے آئی جی پنجاب کا تبادلہ غیر قانونی طور پر روکا، اس حوالے سے الیکشن کمیشن کو خط لکھا کر کہا ہے کہ آئی جی پنجاب کا تبادلہ روکنے کا نوٹیفکیشن واپس لے۔وفاقی وزیر اطلاعات نے مزید کہا کہ آئی جی پنجاب کو کسی ذاتی مسئلے کی وجہ سے تبدیل نہیں کیا گیا جس بیورو کریٹ کو حکومت کی پالیسی سے اختلاف ہو وہ خود کو الگ کر سکتا ہے،جو بیورو کریٹ حکومت کی پالیسی پر عمل نہیں کرے گا اسے گھر جانا ہوگا۔فواد چوہدری نے یہ بھی کہا کہ بیورو کریسی کو صرف پی ٹی آئی ہی نہیں بلکہ تمام ایم این ایز اور ایم پی ایز کا احترام کرنا ہوگا۔ان کا کہناتھاکہ شہبازشریف سمیت کوئی مقدمہ تحریک انصاف نے نہیں بنایا اور نہ سیاسی انتقام کے طور پر استعمال کررہے ہیں، اپوزیشن کے خلاف جو بھی مقدمے ہیں وہ ہم نے نہیں بنائے۔وزیر اطلاعات نے مزید کہا کہ اپوزیشن چاہتی ہے کہ سارے مل کر کرپشن کی یونین بنائیں، ایسا نہیں ہو سکتا ،کرپشن کے جو بھی مقدمات ہیں انہیں منطقی انجام تک پہنچائیں گے۔فواد چوہدری نے کہا کہ آئی ایم ایف کے پاس اسی لیے جانا پڑرہا ہے کہ کرپشن کا پیسہ بیرون ملک جاتا ہے،ہمارے ملک کی مثال ایسی ہی ہے کہ کسی کے گھر پر ڈاکہ پڑگیا ہو۔انہوں نے کہا کہ ہمارا سارا سامان یہ ڈاکو ملک سے لوٹ کر لے گئے ہیں،جب تک لوٹا ہوا پیسہ واپس نہیں آتا تب تک قرض لیکر ہی گھر چلانا پڑتا ہے۔وفاقی وزیر اطلاعات نے کہا کہ حکومت سانحہ ماڈل ٹاؤن کی آزادانہ تحقیقات کرائے گی ،سانحہ ماڈل ٹاون میں ملوث پولیس افسران کو نہ ہٹانا آئی جی پنجاب محمد طاہر کے تبادلے کی ایک وجہ ہے۔فواد چوہدری نے کہا کہ کوئی اپوزیشن مطالبہ نہیں کرے گی کہ معاشی بحران کی بھی کمیٹی بنائی جائیجو لوگ اقتدار میں رہے ہیں ان کا کچا چٹھا سب جانتے ہیں،بیوروکریسی سمجھ رہی ہے کہ انھیں ملک چلانا ہے، ملک بیوروکریسی کو نہیں حکومت کو چلانا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں