12

ہرجانہ کیس میں پاکستان نے آئی سی سی کو جواب دیدیا

کراچی(فری ہینڈ نیوز)ہرجانہ وصولی کیس میں پاکستان نے آئیسی سی کو اپنا تحریری جواب جمع کرادیا۔پاکستان کرکٹ بورڈ نے آئی سی سی کو بھارت کے ساتھ باہمی سیریز کی منسوخی پر ہرجانے کے کیس میں اپنا تحریری جواب جمع کرادیا ہے، آئی سی سی کے ڈسپیوٹ پینل نے پی سی بی اور بھارتی کرکٹ بورڈ کو اپنا تحریری جواب جمع کرانے کیلیے ایک ہفتے کا وقت دیا تھا۔پاکستان بورڈ نے اپنے جواب میں واضح کیا کہ بھارت کی جانب سے دونوں ممالک کے درمیان باہمی سیریز کے حوالے سے کیے جانے والے معاہدے کی پاسداری نہ کرنے سے اسے کثیر مالی نقصان برداشت کرنا پڑا ہے۔پی سی بی نے اپنے تحریری جواب میں یہ بھی لکھا کہ بی سی سی آئی کے ساتھ سیریز کے حوالے سے جو معاہدہ ہوا تھا اس میں کہیں پر بھی حکومتی اجازت کا ذکر نہیں یا شق شامل نہیں تھی۔یاد رہے کہ آئی سی سی کے ڈسپیوٹ پینل نے معاملے کی تین روزہ سماعت رواں ماہ کے آغاز میں کی تھی، جس کے بعد فیصلے کو محفوظ کرلیا گیا۔دونوں بورڈز کے درمیان تنازع اپریل 2014 میں طے پانے والے ایک معاہدے کا ہے جس کے تحت بی سی سی آئی نے پاکستان کے ساتھ باقاعدگی سے باہمی سیریز کھیلنے کا وعدہ کیا تھا مگر بعد میں اس نے اس کی پاسداری نہیں کی جس کی وجہ سے پی سی بی نے کھیل کی عالمی گورننگ باڈی میں ایک نوٹس آف ڈسپیوٹ جمع کرایا تھا جس میں بی سی سی آئی سے نقصان کی تلافی کا مطالبہ کیا گیا تھا، پاکستان بورڈ کی جانب سے دو منسوخ شدہ سیریز کیلیے 70 ملین ڈالر ہرجانے کا مطالبہ کیا گیا ہے۔احسان مانی نے کہا کہ جس وقت میں پی سی بی میں آیا بھارت کیخلاف زرتلافی کیس میں تقریباً تمام کام ہو چکا تھا صرف اب دبئی میں سماعت ہوئی ہے، میں اس کیس میں زیادہ انوالو نہیں رہا، البتہ ہمارے پاکستانی اور برطانوی وکلا بہت پُراعتماد ہیں کہ پاکستان کا کیس مضبوط ہے، اسی کے ساتھ یہ بات بھی ذہن میں رکھنے کی ہے کہ اس قسم کے کیسز میں نتیجے کی کوئی ضمانت نہیں دی جا سکتی کہ کون جیتے اور کون ہارے گا۔ایک سوال پر احسان مانی نے کہا کہ بھارت نے پاکستان سے کرکٹ معاملات کو سیاسی بنا دیا ہے، البتہ کرکٹ ہو رہی ہے جیسے ابھی ایشیا کپ میں دونوں ٹیمیں 2 بار مدمقابل ہوئیں،وہاں اب 3،4 ماہ میں عام انتخابات ہونے والے ہیں اور کرکٹ پر سیاست بھی ہوگی۔ لہذا اس دوران تو کوئی پیش رفت ممکن نہیں، البتہ اس کے بعد امید ہے کہ کچھ بہتری آئیگی، انھوں نے کہا کہ دبئی میں میری بھارتی بورڈ کے نمائندوں سے بھی بات ہوئی، وہ بھی پاکستان سے کرکٹ کھیلنا چاہتے ہیں بس ٹائمنگ دیکھنا ہوگی۔چیئرمین بورڈ نے کہا کہ یو اے ای میں ون ڈے اور ٹی ٹوئنٹی میچز میں خاصا کراؤڈ آتا ہے، مستقبل میں وہاں پاک بھارت سیریز بھی ممکن ہوگی، اسی طرح ہمارے پاس انگلینڈ کا آپشن بھی موجود ہے جہاں چیمپئنز ٹرافی میں روایتی حریفوں کے درمیان میچ میں گراؤنڈ شائقین سے کھچا کھچ بھرا ہوا تھا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں