70

صادق آباد ٹرین حادثہ: 21 افراد جاں بحق، 80 سے زائد زخمی

صادق آباد(فری ہینڈ‌نیوز) صادق آباد میں لاہور سے کوئٹہ جانے والی اکبر ایکسپریس مین لائن سے ہٹ کر ولہار اسٹیشن کی لوپ لائن پر کھڑی مال گاڑی سے ٹکرانے کے المناک حادثے میں ہلاکتوں کی تعداد 21 ہوگئی ہے جبکہ 89 افراد زخمی ہیں۔ جاں بحق افراد میں ایک ہی خاندان کے چار افراد شامل ہیں۔ رحیم یارخان اور صادق آباد کے اسپتالوں میں ایمرجنسی نافذ کردی گئی ہے۔ حادثے کے باعث ٹرین کی پانچ بوگیاں تباہ ہوگئیں جبکہ کئی شدید متاثر ہوئیں، بعض مسافر متاثرہ بوگیوں میں پھنسے رہے۔ ابتدائی تحقیقات کے مطابق ٹرین حادثہ سگنل سسٹم کی خرابی کے باعث پیش آیا، حادثے کے بعد کراچی سے ٹرینوں کی روانگی بھی تاخیر کا شکار ہے۔ ٹرین حادثے کے جاں بحق افراد میں ایک ہی خاندان کے چار افراد شامل ہیں، شاہ کوٹ کے ڈاکٹر بشیر، ان کی اہلیہ اور دو بیٹے حادثے میں جاں بحق ہوئے، جبکہ ایک بیٹا اور بیٹی زخمی ہیں۔ حادثے کا شکار اکبر ایکسپریس کی بوگیاں کاٹ کر لاشوں اور زخمیوں کو نکالا گیا، امدادی سرگرمیوں کے لیے پاک فوج کا دستہ ولہاراسٹیشن پہنچ گیا۔ ایڈیشنل جنرل منیجر کا کہنا ہے کہ حادثےکی جگہ پر کوئی زخمی اور مسافر موجود نہیں، سڑکیں ٹوٹی ہونےکے باعث امدادی ٹیموں کو حادثے کی جگہ پہنچنے میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔ 21 روز میں ٹرین کے دو بڑے حادثات نے ریلوے حکام و عملے کی لاپروائی اور غفلت کا پول کھول دیا۔ 20 جون کو حیدرآباد میں ہونے والے ٹرین حادثے کی وجوہات کیا تھیں اور ذمے دار کس کو قرار دیا گیا؟، انکوائری رپورٹ اب تک منظر عام پر نہیں لائی جاسکی۔ حیدرآباد میں ٹرین حادثے کے بعد سے متاثر ہونے والا ٹرینوں کا شیڈول اب تک معمول پر نہ آسکا، ٹرینیں اب بھی گھنٹوں تاخیر کا شکارہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں