17

امریکا نے واضح کیا ہے کہ کشمیر پر مؤقف نہیں بدلا، پاکستانی سفیر

امریکہ(فری ہینڈ نیوز) امریکا میں پاکستان کے سفیر اسد مجید خان کہتے ہیں کہ امریکا نے واضح کیا ہے کہ کشمیر سے متعلق اس کا مؤقف تبدیل نہیں ہوا ہے۔ امریکا میں پاکستان کے سفیر اسد مجید خان نے کہا کہ صدر ٹرمپ کی جانب سے ثالثی کی پیش کش کشمیر کو متنازع علاقہ تسلیم کرنے کا اعتراف ہے۔ انہوں نے اپیل کی کہ امریکا بھارت کو مقبوضہ کشمیر میں حالیہ اقدامات واپس لینے پر مجبور کرے اور عالمی برادری بھارت پر مذاکرات کے لیے دباؤ ڈالے۔ اسد مجید خان کا کہنا ہے کہ امریکی محکمۂ خارجہ کے اہلکار نے واضح طور پر کہا کہ کشمیر کے معاملے پر واشنگٹن کے مؤقف میں کوئی تبدیلی نہیں آئی یعنی کشمیر ایک متنازع علاقہ ہے اور حقیقت میں جب وزیر اعظم عمران خان امریکا کے دورے پر آئے تھے تو امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پیشکش کی تھی کہ وہ اس دیرینہ تنازع کے حل میں مصالحت کے لیے کردار ادا کر سکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ صدر ٹرمپ کی یہ پیشکش از خود اس بات کو ثابت کرتی ہے کہ ایک دیرینہ تنازع موجود ہے جس کا حل ضروری ہے۔ سفیرِ پاکستان نے کہا کہ میرے خیال میں پاکستان کے لیے امریکا کو معاملے سے مسلسل جڑے رہنا چاہیے اور ساتھ ہی امریکا کو بحیثیت دنیا کی ایک بڑی طاقت یہ ذمہ داری ادا کرنی ہو گی کہ نہ صرف وہ تنازع کا جائزہ لے بلکہ دونوں ممالک کے درمیان بات چیت کا ماحول بنانے میں تعاون کرے۔ انہوں نے مزید کہا کہ امریکا کو بھارت پر اس بات کے لیے بھی زور دینا چاہیے کہ وہ ان تمام فیصلوں کو ختم کرے جو اس نے گزشتہ ہفتے کے دوران کیے ہیں، جن فیصلوں میں مقبوضہ وادی میں فوج کا بے انتہا اضافہ، بڑے پیمانے پر گرفتاریاں اور وادی کو ایک بہت بڑی جیل میں تبدیل کرنا شامل ہے۔ اسد مجید نے یہ بھی کہا کہ پاکستان اقوامِ عالم پر زور دیتا ہے کہ وہ خاص طور پر مذاکرات اور بات چیت کے اس عمل کو یقینی بنوائیں جس کی پیشکش وزیرِ اعظم پاکستان عمران خان اپنا عہدہ سنبھالنے کے بعد سے مسلسل کر رہے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں