21

لاہور ہائی کورٹ نے وفاق اور نیب کا موقف مسترد کردیا

لاہور(فری ہینڈ نیوز) لاہور ہائی کورٹ نے وفاق اور قومی احتساب بیورو ( نیب) کا موقف مسترد کرتے ہوئے نواز شریف کا نام ایگزٹ کنٹرول لسٹ (ای سی ایل) سے نکالنے کی شہباز شریف کی درخواست کو قابل سماعت قرار دیدیا۔ لاہور ہائی کورٹ نے نواز شریف کا نام غیر مشروط طور پر ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست پر محفوظ کیا گیا فیصلہ سنادیا ہے۔ فیصلے میں درخواست کے قابل سماعت ہونے سے متعلق عدالتی دائرہ اختیار پر وفاق اور نیب کے موقف کو مسترد کیا گیا ہے۔ عدالت نے شہباز شریف کے وکلاء کی استدعا پر نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست پر سماعت کل مقرر کردی ہے، عدالت صبح ساڑھے 11 بجے درخواست کی سماعت کرے گی۔ اس سے قبل اپوزیشن لیڈر شہباز شریف کی لاہور ہائیکورٹ میں سابق وزیراعظم نواز شریف کا نام غیر مشروط طور پر ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست کی سماعت ہوئی۔ وفاقی حکومت نے انڈیمنٹی بانڈ کے بغیر نواز شریف کا نام ای سی ایل سے نکالنے کی مخالفت کی اور لاہور ہائی کورٹ میں 45 صفحات پر مشتمل تحریری جواب جمع کرایا تھا۔ وفاقی حکومت نے اپنے جواب میں کہا کہ لاہور ہائی کورٹ کو شہباز شریف کی اس درخواست کی سماعت کا اختیار نہیں ہے۔ حکومت نے شہباز شریف کی درخواست مسترد کرنے اور انڈیمنٹی بانڈ کی شرط قائم رکھنے کی عدالت عالیہ سے استدعا کی۔ جواب میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ نواز شریف سزایافتہ ہیں، انڈیمنٹی بانڈ کے بغیر اجازت نہیں دی جاسکتی، ای سی ایل میں نام نیب کے کہنے پر ڈالا تھا۔ نیب نے اپنے جواب میں کہا تھا کہ ای سی ایل سے نام نکالنا وفاقی حکومت کا کام ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں